Home / Urdu News / سانحہ ماڈل ٹاؤن کی انکوائری رپورٹ 30 روز میں شائع کی جائے: لاہور ہائی کورٹ

سانحہ ماڈل ٹاؤن کی انکوائری رپورٹ 30 روز میں شائع کی جائے: لاہور ہائی کورٹ

سانحہ ماڈل ٹاؤن کی انکوائری رپورٹ 30 روز میں شائع کی جائے: لاہور ہائی کورٹ

تصویر کے کاپی رائٹ
Getty Images

Image caption

یاد رہے کہ سنہ 2014 میں پاکستان عوامی تحریک کے کارکنوں اور پنجاب پولیس کے درمیان جھڑپ کے دوران 14 افراد ہلاک اور متعدد زخمی ہوئے تھے۔

لاہور ہائی کورٹ نے حکومتِ پنجاب کو حکم دیا ہے کہ سانحہ ماڈل ٹاؤن کی انکوائری رپورٹ 30 روز میں شائع کی جائے اور ہدایت کی ہے کہ یہ رپورٹ اس واقعے کے متاثرین کو فوری طور پر فراہم کی جائے۔

منگل کے روز جسٹس عابد عزیز شیخ کی سربراہی میں لاہور ہائی کورٹ کے فل بینچ نے سانحۂ ماڈل ٹاؤن کی رپورٹ منظر عام پر لانے کی اپیل پر فیصلہ سناتے ہوئے پنجاب حکومت کی انٹرا کورٹ اپیل مسترد کر دی اور یہ حکم پنجاب حکومت اور پولیس اہلکاروں کی جانب سے دائر ایک ہی نوعیت کی تین اپیل مسترد کرتے ہوئے دیا۔

پنجاب حکومت سمیت دیگر اپیل کندگان نے سانحہ ماڈل ٹاؤن کی جوڈیشل انکوائری کو پبلک کرنے کے عدالتی فیصلے کو چیلنج کیا اور اسے کالعدم قرار دینے کی استدعا کی تھی۔

اس بارے میں

سانحۂ ماڈل ٹاؤن: انکوائری رپورٹ منظرِ عام پر لائی جائے

طاہرالقادری کی واپسی، ماڈل ٹاؤن کیس میں انصاف کا مطالبہ

’ہم نے ایک بہترین پولیس افسر کھو دیا‘

’پاناما ون ختم، پاناما ٹو شروع ہو گیا ہے‘

لاہور ہائی کورٹ کے فل بنچ نے یہ حکم بھی دیا کہ پبلک کی جانے والی جوڈیشل انکوائری رپورٹ کا ماتحت عدالتوں میں زیر سماعت سانحہ ماڈل کے مقدمات پر اثر نہیں پڑے گا اور اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ مقدمہ شفاف انداز میں چلایا جائے۔

یاد رہے کہ سنہ 2014 میں پاکستان عوامی تحریک کے کارکنوں اور پنجاب پولیس کے درمیان جھڑپ کے دوران 14 افراد ہلاک اور متعدد زخمی ہو گئے تھے۔

رواں برس 21 ستمبر کو لاہور ہائی کورٹ نے سانحہ ماڈل ٹاؤن کے حوالے سے جسٹس باقر نجفی کی رپورٹ کو منظرعام پر لانے کا حکم جاری کیا تھا۔

اس موقعے پر بی بی سی اردو کے نامہ نگار عمر دراز سے بات کرتے ہوئے سانحۂ ماڈل ٹاؤن کے متاثرین کے وکیل اشتیاق چودھری نے بتایا کہ لاہور ہائی کورٹ میں دی جانے والی درخواست میں سانحۂ ماڈل ٹاؤن کے متاثرین نے عدالت سے استدعا کی تھی کہ انھیں بتایا جائے کہ ان کے پیاروں کی موت کے ذمہ داران کون ہیں۔

قانونی ماہرین کے مطابق پنجاب حکومت لاہور ہائیکورٹ کے فل بنچ کے اس فیصلے کے خلاف سپریم کورٹ سے داد رسی کے لیے رجوع کر نے کا حق رکھتی ہے۔

About admin

Check Also

جنگِ اکہتر کا لمحہ جو دلی کے قومی عجائب گھرمیں محفوظ ہے

جنگِ اکہتر کا لمحہ جو دلی کے قومی عجائب گھرمیں محفوظ ہے تصویر کے کاپی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *